ایچی سن کالج میں گورنر پنجاب بلیغ الرحمن کی جانب سے وفاقی وزیر کے بچوں کےلئے پالیسی تبدیل کرنے کا معاملہ

0
36

پاکستان ٹوڈے کی تفصیلات کے مطابق پرنسپل ایچی سن مائیکل اے تھامسن نے یکم اپریل سے چھٹی پر جانے کا اعلان، پرنسپل کی جانب سے گورنر پنجاب بلیغ الرحمن اور کالج سٹاف کو اہم خط ۔

یکم اپریل سے چھٹی پر جارہا ہوں، آئندہ داخلوں اور انتظامی امور میں کوئی کردار نہیں ہوگا، سکولوں میں سیاست اور اقربا پروری کی کوئی جگہ نہیں۔

بعض افراد کو ایڈجسٹ کرنے کے لیے واضح پالیسی سازی کے درمیان ایک اہم فرق ہے کیونکہ ایسے لوگ صرف ترجیحی سلوک پر اصرار کرتے ہیں۔

بورڈ کی سطح پر جو کچھ ہو رہا ہے اسے پڑھا اور سنا ہو گا میں نے اس وجہ سے ایچی سن کو چھوڑنے کا ارادہ نہیں کیا، انتہائی ناقص حکمرانی کے تسلسل نے میرے پاس کوئی دوسرا راستہ نہیں چھوڑا۔

پرنسپل کے طور پر اپنے پورے وقت میں نے ضرورت مندوں کے ساتھ ہمدردی کا اظہار کرتے ہوئے اسکول کی ساکھ کی حفاظت کے لیے اپنی پوری کوشش کی۔

گزشتہ ایک سال کے دوران گورنر ہاؤس کے متعصبانہ اقدامات نے گورننس اور نظم و نسق کی خرابی میں حصہ ڈالا۔ متعصبانہ اقدامات کے تحت مجھے آخر کار ایک لکیر کھینچنی پڑی۔ یہ میرے لیے ناقابل یقین لگتا ہے، اور ممکنہ طور پر زیادہ تر لوگوں کے لیے، کہ اتنا کامیاب اسکول اس طرح کی غیرضروری مداخلت اور ڈھٹائی سے متعلق ہدایات کا نشانہ بن سکتا ہے۔

ایک نیک نیت غیر ملکی خالص نیت کے ساتھ کسی دوسرے ملک کا سفر نہیں کرتا، اور نہ ہی اس شخص کو کسی بھی طرح سے حوصلہ افزائی یا سہولت فراہم کرنے کے لیے کام کرنا چاہیے جسے وہ غلط سمجھتا ہے۔ یکم اپریل کو چھٹی ہوگی اور آئندہ داخلوں کے انتظام میں کوئی کردار ادا نہیں کرے گی۔

ہم نے مل کر ایچی سن کو نئی شکل دی ہے۔ پرنسپل کا اپنے سٹاف کو خط ، نئی نسل پر آپ کے بے پناہ اثرات مرتب ہو سکتے ہیں۔ انہیں بیکار نہ رہنے دیں، انہیں دیانتداری اور صرف اپنی ذات سے زیادہ اعلیٰ مقاصد کی خدمت کا مقصد بنائیں۔ اس طرح قوم ترقی کرے گی۔

پرنسپل ایچی سن کا استفعی پہلے ہی منظور ہوچکا ہے۔  اگست 2024 سے استعفی منظور کیا گیا تھا نئے پرنسپل کی تعیناتی کےلئے سرچ کمیٹی کام کررہی ہے۔

ایچیسن کالج کے پرنسپل مستعفی ،ایچیسن کالج کے پرنسپل مائیکل اے تھامسن نے اپنے عہدے سے استعفی دے دیا ۔ایچیسن کالج کے پرنسپل کا اپنے سٹاف کے نام خط ، بورڈ کی سطح پر جو ہو رہا ہے وہ آپ سب کو معلوم ہے۔

انتہائی بری گورننس کے تسلسل کی وجہ سے میرے پاس کوئی اور چوائس نہیں بچی میں نے کالج کی شہرت کی حفاظت کے لئے بھرپور کوشش کی، مائیکل اے تھا،

چند افراد کی خاطر پالیسیوں میں تباہ کن تبدیلیاں لائی گئیں، سکولوں میں اقرباء پروری اور سیاست کی کوئی گنجائش نہیں، گورنر ہاوس کے جانبدارانہ اقدامات کے باعث گورننس کا نظام تباہ ہو گیا، سکول کے معاملات میں اتنی دراندازی کامیابی سے چلنے والے سکول کے لئے ناقابل یقین ہے۔

یکم اپریل کو سکول چھوڑ رہا ہوں اور داخلوں کا حصہ نہیں بنوں گا، پرنسپل ایچیسن کالج کے گورنر پنجاب سے وفاقی وزیر کے بچوں کے جرمانے معافی سے اختلافات شروع ہوئے، پرنسپل ایچیسن کالج گورنر پنجاب کے خلاف قانون متعدد اقدامات سے ذہنی دباو میں تھے۔

ایچیسن کالج کے بورڈ آف گورنرزکے سینئر ممبر سید بابر علی بھی بورڈ سے مستعفی ہوگئے

سید بابر علی نے کچھ ہفتے قبل بورڈ سے استعفی دیدیا تھا، سید بابر علی ایچی سن کالج کے ممبر بورڈ کی حیثیت سے پرنسپل مائیکل اے تھامسن کے فیصلوں سے متعلق سراہتے رہے اور ان کے فیصلوں کی تائید بھی کرتے رہے۔

Leave a reply