ماہرین نے تھر کی ریت ’’ چپ‘‘ بنانے کے قابل قرار دیدیا

0
12

پاکستان ٹوڈے: پاکستان میں ٹیکنالوجی کے میدان میں انقلاب برپا۔ پاکستانی آئی ٹی ماہرین نے تھر کی ریت کو ’’چپ‘‘ بنانے کے قابل قرار دیدیا۔ 

تفصیلات کے مطابق محکمہ انفارمیشن ٹیکنالوجی سندھ نے چپ ویفر فاؤنڈری منصوبے سے متعلق ابتدائی پیپرورک تیار کرلیا۔ آئی ٹی سندھ نے پیپر ورک متعلقہ وزارتوں کو ارسال کردیا۔ پاکستان چپ ویفر تیار کرکے ڈیجیٹل ورلڈ مارکیٹ کی بڑی ضرورت کو پورا کرسکتا ہے۔

ماہرین کا کہنا ہےچپ ویفر بنانے کیلئے کوئلے،ریت، پانی بجلی درکار ہوتی ہے ، چپ ویفر فاؤنڈری کیلئے تھر کی ریت موزوں، 250میگاواٹ درکار ہے، جبکہ بجلی بھی تھر میں مل سکتی ہے۔ آئی ٹی ماہرین نے مزید چپ ویفر فاؤنڈری سکیم کی لاگت کا تخمینہ 450ملین ڈالر تک لگایا ہے، جسے سی پیک کے ذریعے مکمل کیاجاسکتاہے۔

اسلام کوٹ ضلع تھرپارکر میں مجوزہ چپ ویفر فاؤنڈری کیلئے 150ایکڑ زمین بھی موجود ہے۔ پاکستان کے پاس ’’چپ‘‘میں استعمال ہونیوالی ٹیکنالوجی نہیں ،لیکن چپ کے ویفر تیار کرسکتاہے۔ ماہرین کاکہنا ہے کہ چپ ویفر فاؤنڈری سے زرمبادلہ کی بچت کے ساتھ اضافی پیداوار امپورٹ بھی کی جاسکتی ہے۔

Leave a reply